Share Your Writing

Write your stories on Pakistan Science Club Blog!

Write your stories on Pak Science Club Blog and Portal

Featured Project

Wednesday, 15 February 2012 17:11

آلودگی سے دل کا دورہ پڑنے کا امکان زیادہ

Rate this item
(0 votes)

ایک فرانسیسی تجزیے میں کہا گیا ہے کہ آلودہ ہوا میں سانس لینے سے چند روز بعد دل کا دورہ پڑنے کا امکان زیادہ ہو سکتا ہے۔

Paris Cardiovascular Research Center کی سائنسدان Hazrije Mustafic کی زیر قیادت ٹیم کی یہ تحقیق امیریکن جرنل آف میڈیکل ایسوسی ایشن میں شائع ہوئی ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ اوزون کے سوا ہر قسم کی آلودہ ہوا کی بلند سطح میں سانس لینے سے دل کے دوروں کا امکان کچھ زیادہ ہو جاتا ہے۔

تحقیق کے دوران ماضی میں صنعتی اور ٹریفک سے متعلقہ فضائی آلودگی کے باعث دل کا دورہ پڑنے کے 34 مطالعوں کا تقابلی جائزہ لیا گیا۔ ان سابقہ مطالعوں میں چار سو سے تین لاکھ تک افراد کے اعداد و شمار موجود تھے۔

سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ آلودہ ہوا میں سانس لینے سے امراض قلب کا خطرہ بڑھ جاتا ہے

زیادہ تر آلودہ اجزاء میں 10مائیکرو گرام فی کیوبک میٹر ہوا کے ارتکاز میں اضافے سے دل کا دورہ پڑنے کے امکان میں ایک تا تین فیصد اضافہ ہو جاتا ہے۔

سائنس دان Hazrije Mustafic نے روئٹرز ہیلتھ سے گفتگو میں کہا، ’’چاہے اس کے تمباکو نوشی، ہائپر ٹینشن یا ذیابیطس جیسے روایتی عوامل کے مقابلے میں خطرات کم بھی ہیں مگر صنعتی ملکوں میں ہر شخص فضائی آلودگی کا شکار ہے۔‘‘

انہوں نے کہا کہ جب لوگ آلودہ ہوا میں سانس لیتے ہیں تو چھوٹے چھوٹے ذرات پھیپھڑوں میں موجود ننھی تھیلیوں تک پہنچ سکتے ہیں اور یوں وہ خون کے بہاؤ کے ذریعے دل تک پہنچ جاتے ہیں۔

ماہرین صحت کے بقول آلودگی کے خطرات تمباکو نوشی اور دیگر عوامل کے مقابلے میں کچھ کم ہیں مگر موجود ضرور ہیں

یہ ذرات خون کی شریانوں کی پھولنے اور پچکنے کی صلاحیت کو بھی متاثر کر سکتے ہیں جو کہ خون کے دباؤ کو مستقل رکھنے کے لیے ضروری ہے۔

کولمبس کی اوہایو اسٹیٹ یونیورسٹی میں آلودگی اور امراض قلب پر تحقیق کرنے والے سنجے راجہ گوپالن نے کہا، ’’اگر آپ تمام شواہد کو ایک جگہ رکھیں تو روز بروز آلودہ ذرات کے ارتکاز سے امراض قلب کے واقعات میں بہت تھوڑا مگر نمایاں فرق پڑتا ہے۔‘‘

انہوں نے روئٹرز ہیلتھ کو بتایا کہ یہ خاص طور پر ان افراد میں زیادہ نظر آتا ہے جن میں پہلے سے دل کا عارضہ موجود ہوتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ دل کے امراض کے شکار افراد کو ہر ممکن حد تک آلودگی سے بچنے کی کوششیں کرنی چاہییں۔

 

Source:http://www.dw.de/

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated.\nBasic HTML code is allowed.

Latest Blog

  • Science for Youth (S4Y) week

    The National Academy of Young Scientists in Pakistan (NAYS) is going to celebrate this first Science for Youth week in Pakistan from 14th to 20th April. The themes reflect the importance of active participation of students and researchers. The Science[…]

Science 4 Youth Science Week

Latest Video

  • Hovercraft made by PSC Members in 2006 Hovercraft made by PSC Members in 2006 at Srfaraz pilot[…]

IEEE Karachi Section Workshop and Science Fair