Share Your Writing

Write your stories on Pakistan Science Club Blog!

Write your stories on Pak Science Club Blog and Portal

Featured Project

Monday, 29 August 2011 17:03

درد کے لیے ٹھنڈک اور حرارت دونوں مفید

Rate this item
(0 votes)
درد کے لیے ٹھنڈک اور حرارت دونوں مفید درد کے لیے ٹھنڈک اور حرارت دونوں مفید

جرمن سائنسدانوں نے اپنی تحقیق میں کہا ہے کہ درد میں افاقے کے لیے حرارت اور ٹھنڈک دونوں سے مدد مل سکتی ہے، تاہم اس کا انحصار درد کی نوعیت اور سبب پر ہے۔

فیڈرل یونین آف جرمن ایسوسی ایشنز آف فارماسسٹس کے ایگزیکٹو بورڈ کے رکن آندریاز کائفر کا کہنا ہے، ’’ایک عام اصول یہ ہے کہ ٹھنڈک سے شدید درد میں آرام پہنچتا ہے جبکہ حرارت دائمی درد میں سکون پہنچاتی ہے۔‘‘

کھیلوں کے دوران لگنے والی چوٹیں اور زخم مثلاﹰ اندرونی چوٹوں، موچ یا عضلات کے کھچاؤ میں ہر ممکن جلد ٹھنڈک پہنچانی چاہیے۔ ٹھنڈک سے کسی کیڑے کے کاٹے سے پیدا ہونے والی شدید سوزش میں بھی مدد ملتی ہے۔ ٹھنڈک پہنچانے کے لیے بہتا ہوا پانی، برف کے ٹکڑے، ٹھنڈے کمپریسر یا کولڈ اسپرے میں سے کچھ بھی استعمال کیا جا سکتا ہے۔

تاہم کائفر کا کہنا ہے کہ فریج میں رکھے ہوئے ٹھنڈے کمپریسر براہ راست جلد پر نہیں لگانے چاہییں، کیونکہ اس سے خاص طور پر جوڑوں میں شدید سردی لگنے کا عارضہ ہو سکتا ہے۔ بہتر ہے کہ جلد اور کمپریسر کے درمیان باریک کپڑا رکھا جائے۔ اگر کمپریسر بہت زیادہ ٹھنڈا ہو اور اسے ہٹایا جائے تو پھر خون کا بہاؤ بہت زیادہ بڑھ جاتا ہے اور درد کی شدت میں اضافہ ہو جاتا ہے۔ کائفر نے کہا، ’’اگر کھیلوں کی وجہ سے ہونے والا زخم تین دن میں ٹھیک نہیں ہوتا یا اس کی وجہ سے سے جوڑ کے فعل میں رکاوٹ پیدا ہوتی 

حرارت سے بھی درد میں آرام پہنچتا ہے۔ اس سے رگوں اور ریشوں میں زیادہ لچک پیدا ہوتی ہے اور جوڑوں کو زیادہ حرکت دینے میں مدد ملتی ہے۔ اس سے عضلاتی کھچاؤ میں بھی افاقہ ہوتا ہے۔ حرارت سے دورانِ خون تیز ہوتا ہے اور اس کے  نتیجے میں بافتوں میں زیادہ خوراک پہنچتی ہے اور فاضل مادے تیزی سے خارج ہوتے ہیں۔

حرارت حیض کے دنوں میں پیٹ کے نچلے حصے کے درد میں آرام کے لیے بھی مفید ہے۔ گرم پانی سے غسل یا پیٹ کے زیریں حصے پر گرم پانی کی بوتل یا گرمائش والا پیڈ رکھنا ہی کافی ہے۔ اس کے علاوہ خون کی نالیوں کو ڈھیلا کرنے والی کریم یا heating patches بھی استعمال کیے جا سکتے ہیں کیونکہ وہ کام کی جگہ پر مزاحم نہیں ہوتے۔

تاہم شدید سوزش یا بخار میں مبتلا شخص کو حرارت کا استعمال نہیں کرنا چاہیے۔ اس کے علاوہ وریدوں یا گردش خون سے متعلق طبی مسائل والے لوگوں کو بھی ڈاکٹر سے رجوع کرنا چاہیے۔

Source: http://www.dw-world.de/dw/article/0,,15350872,00.html

Leave a comment

Make sure you enter the (*) required information where indicated.\nBasic HTML code is allowed.

Search

Subscribe

Enter your email address:

Delivered by FeedBurner

Find us on Google+

Member Area





Latest Blog

  • Pakistan Science Club initiates Final Year Project (FYP) Video Library

    Pakistan Science Club initiates Final Year Project (FYP) Video Library. The key attributes behind every... more »Related Posts:PSC introduced a new websiteSEE14 Junior and Senior ProjectsDesign Competition VideoStudent Engineering Exhibition 2014 SEE’14PAKSC Launches Beta Version of Science Video Portal Onlinevolunteer[…]

مقبول خبریں اور مضامین